پاکستان

وطن یا کفن آزادی یا موت محض ایک نعرہ نہیں بلکہ قیام پاکستان کی بنیاد تھا،پیر یاسر

وطن یا کفن آزادی یا موت محض ایک نعرہ نہیں بلکہ قیام پاکستان کی بنیاد تھا۔

میرے نانا امام انقلاب شہید سورہیہ بادشاہ نہ صرف پاکستان بلکہ عالم اسلام کے بھی ھیرو ہیں 20 مارچ قومی سطح پرامام انقلاب شہید سورہیہ بادشاہ ڈےکے طور پر مناۓجاۓ ، پیر یاسر

پاکستان مسلم لیگ فنکشنل کے مرکزی نائب صدر پیر یاسر نے اپنے جاری کردہ بیان میں کہا کہ حضرت پیر سید صبغت اللہ شاہ راشدی دوئم المعروف امام انقلاب شہید سورہیہ بادشاہ نے انگریز سامراج کے خلاف علم بغاوت بلند کر کے مسلمانوں میں جزبہ جھاد کو دوبارہ زندہ کیا اور انھیں غلامی کے اندھیروں سے نکال کر آزادی کے جزبہ سے روشناس کیا اورانگریز سامراج کے چنگل سے سندہ کو آزاد کروا کے قیام پاکستان کی پہلی اینٹ رکھی ان سمیت ان کے ہزاروں حروں نے اپنی جانوں کے نظرانوں دے کر سندہ کی عوام کو ان کے حقوق دلواۓاور انگریزسامراج کی زیادتیوں ظلم وستم بربیت کالے قانون اور غلامی سے نجات دلائی۔

پیریاسر نے مزید کہا امام انقلاب شہید سورہیہ بادشاہ عالم اسلام کے بہادر، بےباک،بےمثال نوجوان رہنما تھےجنھوں نے اپنی دانشمندی ، جذبہ خدمت خلق ، شجاعت ، دوراندیشی اور روحانی بصیرت سے سندہ اور ہند کے مسلمانوں کو اکھٹا کرکے آزادی کا راہ پر چلنے کا راستہ اور اپنے وطن کی امید اور خواب دیکھاتے ہوے انگریزوں کے خوابوں کو چکناچور کردیا اور انگریزوں کے راج کی بنیادیوں کو ہلا کر رکھ دیا انگریز آج بھی ان کے نام سے خوفزدہ ہیں

پیر یاسر کا مزید کہنا تھا کہ امام انقلاب شہیدسورہیہ بادشاہ بلاشبہ مسلمانوں کے لیے آزادی کے پرستار اور سادات کے سپوت تھے انھوں نے برصغیر کے مسلمانوں کو غلامی سے نجات دلانے کے لیے کہا کہ شہادت ہمارا تاج اسے آگے بڑھ کے پہن لیناہمارے لیے عبادت ہے ہم نے صرف آزادی کو چاہا ہےاور یہ کوئی جرم نہں ہے اور حریت پسندوں اور مجاہدوں کے شایان شان مسکراتے ہوۓ پھانسی کا پہندہ قبول کیا اور خالق حقیقی سے جا ملے لیکن جابر کافر انگریز سامراج کی غلامی قبول نہں کی اورقیام پاکستان کی جدوجہد کا اغاز ہوا۔حکومت نہ صرف 20 مارچ کوقومی سطح پر امام انقلاب ڈے سے منصوب کرے بلکہ تدریسی نصاب میں بھی امام انقلاب کے نام سے سبق شامل کرے تاکہ ہماری نسلوں کو قیام پاکستان کے لیے ہمارے آب واجداد کی قربانیوں کا اندازاہ ہو سک

Show More

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button

Adblock Detected

Welcome! It looks like you're using an ad blocker. That's okay. Who doesn't? But without advertising-income, we can't keep making this site awesome.